جموں کشمیر سٹیٹ کواپرئیٹو بنک کے منافع میں80فیصد اضافہ

9 اکتوبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

سرینگر//جموں کشمیر سٹیٹ کواپرئیٹو بنک نے اپریل سے ستمبر2018تک کا اپنے چھ ماہی نتائج کوجاری کیا ہے۔بنک کے چیرمین ایم ایس ڈار نے ان نتائج پر اطمینان کااظہار کرتے ہوئے کہا کہا کہ یہ بنک انتظامیہ کی ترقی کی اُس راہ کے بالکل عین مطابق ہے جو انہوں نے مستقبل کیلئے تعین کی تھی۔بنک کی مجموعی تجارت1100کروڑ روپے تک پہنچ گئی ہے،جبکہ اس مدت کے دوران بنک میں جمع رقم800 کروڑ روپے ہوگئی ہے۔اسی مدت کے دوران بنک نے65 کروڑ روپے کے قرضے واگذار  کئے ہیں ۔جمع کھاتوں کا معیار جوکہ قیمتوںکے ذریعے واضح کیا گیا ہے نے تواتر کے ساتھ اضافہ درج کیا ہے۔ سیونگ بنک اور کرنٹ اکاونٹوں کے تناسب میں کم اخراجات والے ڈیپازٹوں نے 45 فیصد کی حد پار کرلی ہے۔  بنک کی کلیدی کامیابی منافع میں اضافہ ہے جو سالانہ بنیادوں پر80فیصد ہوگیا ہے۔اثاثوں کے معیار میں بھی قابل ذکر بہتری آئی ہے ۔کلہم این پی اے کم ہوکر ایک فیصد رہ گیا ہے۔چیرمین ایم ایس ڈار نے کہا کہ بنک نے لچک اور مطابقت دونوں ترکیب وعمل میں اپنائی ہے تاکہ طویل المدتی اہداف کو حاصل کیا جائے۔ڈار نے مزید کہا کہ بنک کی بنیاد مضبوط ہوئی ہے اور یہ اب کسی بھی کمرشل بنک سے مقابلہ کرسکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ بنک جموں خطے میں بھی اب اپنے پر پھیلا رہا ہے اور جموں میںبنک کے پہلے شاخ کا افتتاح نروال میں اگلے ماہ ہوگا۔بنک چیرمین نے ملازمین کی کارکردگی پر اطمینا ن کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ آئندہ بھی بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کریں گے۔بنک کے منیجنگ ڈائریکٹر ایم لطیف نے کہا کہ بنک نے لگ بھگ اپنے منافع کو دگنا کیا ہے اور امید ظاہر کی کہ بنک کی ترقی کی رفتار برقرار رہے گی۔انہوں نے کہا کہ بنک کی توجہ این پی اے کی حد کو کم کرنے پر مرکوز تھی ۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ بنک جلد ہی موبائیل اور نیٹ بینکنگ بھی شروع کررہا ہے ۔لطیف نے بنک کے گاہکوں کا شکریہ اداکیا جنہوں نے بنک پر اعتماد کرکے اس کی ترقی کو ممکن بنایا۔
 

تازہ ترین