تازہ ترین

ایس کے آئی سی سی میں ثالثی ورکشاپ جاری

ماہرین قانون کا ثالثی کے نظام کو فروغ دینے پر زور

7 اکتوبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

سرینگر//ایس کے آئی سی سی سرینگر میں ریاستی ہائی کورٹ کی میڈیشن اینڈ کنسائی لیشن کمیٹی اور ریاستی حکومت کے مشترکہ اہتمام سے منعقد کئے گئے تین روزہ ثالثی ورکشاپ میں کل دوسرے روز بھی شرکاء اور ماہرین نے ملک میں ثالثی کے نظام پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا ۔ماہرین قانون نے مقامی جج صاحبان اور وکلاء کو انصاف کی بروقت فراہمی کیلئے غیر روائتی ثالثی نظام میں ہوئی پیش رفت کے بارے میں بتایا ۔ مقررین نے ثالثی کے نظام کو فروغ دینے کی ضرورت اور اس کے زیادہ سے زیادہ استعمال پر زور دیا تا کہ غریب لوگوں کو اخراجات کے بوجھ سے بچایا جا سکے ۔ ورکشاپ کے دوسرے روز جج صاحبان کی پہلی نشست ’’ میڈیشن کی فلاسفی ‘‘ کے موضوع پر منعقد ہوئی جس کی صدارت جسٹس سندھو شرما نے کی جبکہ وکلاء کے سیشن کی صدارت جسٹس رشید علی ڈار نے کی ۔ جج صاحبان کیلئے دوسری نشست ’’ کمیونی کیشن ‘‘ کے موضوع پر منعقد ہوئی جس کی صدارت جسٹس دھیرج سنگھ ٹھاکر نے کی جبکہ وکلاء کیلئے نشست کی صدارت جسٹس سنجیو کمار نے کی ۔ جج صاحبان اور وکلاء کیلئے دو مشترکہ نشستوں کی صدارت جسٹس ڈی ایس ٹھاکر اور جسٹس سنجیو کمار نے کی جبکہ اس موقعہ پر جسٹس تاشی ربستن اور جسٹس الوک ارادھے بھی موجود تھے ۔ اس نشست کے دوران ریسورس پرسنز نے شرکاء کے ساتھ مختلف معاملات پر تبادلہ خیال کے علاوہ معاملات کو نمٹانے میں ثالثی نظام کی اہمیت پر بحث و مباحثہ کیا ۔ ظہرانے کے بعد جج صاحبان اور وکلاء کیلئے نشستوں کی صدارت بالترتیب جسٹس رشید علی ڈار اور جسٹس سندھو شرما نے کی ۔ اس نشست کے دوران شرکاء نے ریفرل جج ، ریفرل کے مراحل ، اے ڈی آر سے متعلق ریفرنس ، ریفرنس کیلئے مناسب معاملات ، ریفرل آرڈرز، ثالثی کے بعد کے نتایج اور دیگر کئی معاملات پر تبادلہ خیال کیا ۔ قومی اور بین الاقوامی شہرت یافتہ ریسورس پرسنز بشمول دہلی ہائی کورٹ کے رجسٹرار جنرل دنیش کمار شرما ، پرنسپل جج فیملی کورٹ درمیش شرما ، دہلی میڈیشن سنٹر کے جج انچارج شلیندرا کور ، ایس آئی ایم سی سنگا پور کے چیف ایگزیکٹو آفیسر و رجسٹرار الائیسس گوہ، سینئر وکلاء جے پی سنگھ ، سدھانشو بترا اور وکلاء سادھنا راما چندرن ، وینا رالی ، امیتا سہگل اور انوج اگروال نے نشستوں کی نظامت کی ۔