شاہراہِ کربلا

16 ستمبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

راکبِ دوشِ نبیؐ ماہِؓتمامِ کربلا
 
مرگِ زیب و زینتِ دُنیا امامِؓکربلا
کربلا ہے بہرِ اُمّت شاہراہِ جاوِداں
 
کوئی کرتا ہی نہیں ہے اہتمامِ کربلا!
کربلا کا ہے نہیں مقصد فقط آہ و فغاں
 
خاتمۂ یزیدّیت میں ہے دوامِ کربلا
کارواں سُوئے حرم گُم گشتہ منزل، حسرتا!
 
تھامنے والا نہیں کوئی زمامِ کربلا
قتل و غارت کا گرم بازار ہے کشمیر میں
 
ہر صبح ہے کربلا، ہر شام شامِ گربلا
اختلاطِ مرد و زن کا ہر طرف سیلاب ہے
 
بِنتِ مسلم کر رہی ہے اِنہدامِ غلام
اہل بیتِ مُصطفیٰؐ کے ہوں غلاموں کا غلام
 
یہ دلِ مشتاقؔ ہے یا ہے مقامِ کربلا
 
مشتاقؔ کشمیری
رابطہ؛ سرینگر،9596167104

تازہ ترین